سپریم کورٹ کا مشہورہ کسانوں کی اخلاقی جیت

نئی دہلی،17 دسمبر آل انڈیا کسان سنگھرش کورڈنیشن کمیٹی (اے آئی کے ایس سی سی)نے کہا کہ سپریم کورٹ کے ذریعہ تجویز کی گئی کمیٹی کا فائدہ کسانوں کو زرعی اصلاحات قانون کو واپس لینے کے بعد ہی ہوگا اور عدالت کا مشورہ کسانوں کی اخلاقی جیت ہے۔
اے آئی کے ایس سی سی نے عدالت میں اس معاملے پرہوئی سماعت کے بعد جاری ردعمل میں کہا کہ دہلی کی تحریک تین زرعی قانون اوربجلی قانون -2020 کی واپسی تک جاری رہے گا۔ کسان ہمیشہ اپنی رائے رکھتے رہے ہیں۔
کسان تنظیم نے کہا کہ وزیراعظم ملک کے جھوٹ کہہ رہے ہیں کہ ان قانونوں سے کسانوں کی زمین نہیں چھنے گی اور کم ازکم امدادی قیمت (ایم ایس پی) جاری رہے گی – کا دعوی لوگوں کی توجہ ہٹانے کےلئے ہے۔ دودھ پروڈکشن کے کو آپریٹو سرکاری کمیٹیوں کو فروغ دیا،نجی کمپنیوں کو برباد کیا ہے۔
اے آئی کے ایس سی سی نے کہا ہے کہ عدالت کے ذریعہ حکومت کو مشورہ کسانوں کی اخلاقی جیت ہے۔کسان ہمیشہ ہی اپنی رائے رکھنے کےلئے تیار رہے ہیں لیکن اگر کوئی کمیٹی بنتی ہے تب بھی دہلی کی تحریک تین زرعی قانون اور بجلی قانون واپس ہونے تک جاری رہے گی۔ کمیٹی کا بننا تب فائدے مند ہوگا اگر پہلے یہ قانون واپس لئے جائیں اور اے آئی کے ایس سی سی نے کہا کہ وزیراعظم کسانوں کے اپوزیشن کے ذریعہ گمراہ کئے جانے کے پرانے راگ کو الاپ رہے ہیں جبکہ سچ یہ ہے کہ وہ خود ملک کو گمراہ کررہے ہیں۔انہوں نے اپنی پرانی وضاحت کو دہرایا ہے کہ کسان کی زمین نہیں جائے گی،ایم ایس پی سرکاری خرید جاری رہیں گے،قانون کسانوں کےلئے موقع پیدا کررہے ہیں،جبکہ ان کے سارے قدم اسے غلط ثابت کرتے ہیں۔(یواین آئی)

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔