وسیم رضوی کوپھانسی دی جائے

تنویر ھاشمی
وسیم رضوی کوپھانسی دی جائے۔قرآن کتاب ھدایت وامن ہےاس کی برکت سےآج امن قائم ہےقرآن کےایک حرف کوبھی کوئ بدل نہیں سکتاخواہ اسکےلئےجان کیوں نہ چلی جائےمفتی محمدمنظرحسن خان اشرفی مصباحی بانی عالمی سنی صوفی تحریک(الھند)
آج کل کچھ لوگ اپنےگھوٹالےاورغلط کارناموں کوچھپانےکیلئےملک کےامن وامان کوہی بربادکردیناچاھتےہیں۔اس کی نظرمیں ملک کےآئین اوراملک کےامن وامان کی کوئ اہمیت ہی نہیں ہوتی۔اس کی دہشت گردی ہی اس کی ملک سےوفاداری کی دلیل ہوتی ہے۔اسےصرف کرسی اورپاڑٹی میں جگہ چاھئےایسےکچھ لوگ ہرپاڑٹی اورہرذات ودھرم کےنام ولباس میں آپ کونظرآجائینگے۔ایسےکوسرعام ہھانسی دینی چاھئے۔اسی کمینےمیں سےایک نام وسیم رضوی کابھی ہے۔جس کےگھوٹالےوجس پردیگرکاربدکےالزامات کی لمبی فہرست ہے۔اس نےاپنےجرموں پرپردہ ڈالنےکیلئےایک مرتبہ پھرسےیاوہ گوئ کی ہے۔اس نےکھاکہ 26/آیتوں کوقرآن شریف سے ہٹایاجائے۔دینی مدارس دہشت گردی کااڈہ ہےنیزاس نےام المومنین سیدہ ماں عائشہ صدیقہ رضی اللّٰہ عنھااورحضرت امیرمعاویہ رضی اللّٰہ عنہ کی شان میں بھی نازیبا بیان دیاہے۔ہم سخت اس کی مذمت کرتےہیں۔اس حرکت سےاسکامقصدصرف اورصرف اپنےگھوٹالےاورکاربدسےلوگوں کےساتھ محکمہ کےدھیان کوہٹاناہے۔بی جےپی اس کوپاڑٹی سےنکالےاورفتنہ پرورسےملک کی حفاظت کرے۔۔ملک میں فتنہ وفسادکرواناہے۔اس ذلیل کویہ نہیں معلوم کہ اسلام اورقرآن امن وامان کی تعلیم دیتاہےاس کےماننےوالےکبھی بھی نقض امن نہیں کرسکتے۔ہمکواسلام وقرآن مقدس کی تعلیمات کی روشنی میں اپنےملک کےامن وآئین کاخیال ہے ورنہ وسیم رضوی جیسےبدزبان وگستاخ کی زبان کاٹ کرکتےکےآگےپھینک دی جاتی۔وسیم رضوی جیسےبدبخت ہمارےصبرکاامتحان نہ لےاپنی بکواس بندکرے۔قرآن شریف کی ٢٦/آیتوں پرپابندی کی بات وہ کیاکرتاہے ایک حرف کوبھی کوئ شخص نہ ھٹاسکتاہےاورنہ ہی اس پہ کوئ کبھی پابندی لگاسکتاہے۔خواہ اس کےلئے ہم مسلمانوں کی جان ہی کیوں نہ چلی جائے۔دینی مدارس کاصدقہ ہیکہ آج ہم آزادملک میں سانس لےرہےہیں۔مدارس اسلامیہ دہشت گردی  کےاڈےنہیں ہوتے بلکہ وہ امن وامان کےگہوارےہوتےہیں۔مگروسیم جیسےپاگل اندھےدہشت گردوں کوکچھ نظرنہیں آتاہے۔ وہ آرایس ایس کاوفادار غلام ہے۔وسیم جیسابدبخت یہ شیعہ جماعت کیلئےبھی ناسورہے۔اسکا دماغ خراب ہوگیاہے۔ایسوں کی جگہ جیل اورپاگل خانہ ہے۔مگرکچھ پاڑٹی والےجوکام میں ناکام ہوجاتےہیں وہ ایسےپاگلوں اوردہشت گردوں کوپاڑٹی میں دم ہلانےکیلئے رکھتےہیں جوفتنہ کرکےپاڑٹی کی کرسی کوبچاتےرہیں۔۔افسوس ہےملک کےحفاظتی اورعدالتی دستہ پرجن کوایسےبدبخت نظرنہیں آتےہیں۔ایسوں کیلئےان کاگوشہ نرم رہتاہے۔جوصرف اسلام اورمسلمانوں کےہی دشمن نہیں ہیں بلکہ ایسےلوگ پورےملک کےدشمن ہیں۔حکومت کےساتھ ملک کےعدلیہ سےہماری اپیل ہیکہ وسیم جیسےملک کےامن کےدشمن کوپھانسی دی جائےایسےبکواس کرنےوالےکوسخت سزادی جائےاورملک کےامن کی حفاظت کی جائے