کشمیر میں ٹھٹھرتی سردیوں کا زور بدستور قائم، آبی ذخائر مسلسل منجمد

سری نگر،21 جنوری  وادی کشمیر میں سردیوں کے بادشاہ چالیس روزہ ’چلہ کلان‘ کے آخری مرحلے کے دوران بھی ٹھٹھرتی سردیوں کا زور تھمنے کا نام ہی نہیں لے رہا ہے جس کے باعث اہلیان وادی گونا گوں مشکلات سے دوچار ہیں۔ محکمہ موسمیات کی پیش گوئی کے مطابق وادی کشمیر میں 22 جنوری کی رات سے 23 جنوری کی شام تک تازہ برف باری ہونے کا امکان ہے۔ متعلقہ محکمہ کا کہنا ہے کہ وادی میں اس تازہ برف باری سے زمینی و فضائی ٹرانسپورٹ متاثر ہوسکتا ہے۔ دریں اثنا وادی کشمیر میں اگرچہ جمعرات کو بھی موسم خشک بھی رہا اور ہلکی دھوپ بھی چھائی رہی لیکن شبانہ درجہ حرارت نقطہ انجماد سے کافی نیچے درج ہونے سے ٹھٹھرتی سردیوں کا زور برابر قائم رہا جس سے لوگوں کو گوناگوں مشکلات سے دوچار ہونا پڑا۔ وادی میں شدید سردیوں کے باعث نہ صرف آبی ذخائر بشمول جھیل ڈل کی سطح کئی روز سے مسلسل منجمد ہیں بلکہ مساجد، خانقاہوں، پبلک غسل خانوں یہاں تک کہ گھروں میں نصب نل اور پانی کی ٹینکیوں میں بھی پانی جم گیا ہے جس کے باعث شہر و گام میں لوگ پانی کی شدید قلت سے دو چار ہیں۔ جھیل ڈل کی منجمد سطح اگرچہ سیاحوں کے لئے تفریح کا سامان بن گئی ہے اور بلوارڈ روڈ کے کناروں سے ہی انہیں اس منجمد سطح کے دلکش نظاروں سے لطف اندوز ہوتے ہوئے دیکھا جا رہا ہے لیکن ڈل میں رہائش پذیر لوگ گوناگوں مشکلات سے دوچار ہیں۔

(یو این آئی)