غزل

اب   کوئی    اہل  حق  کا  مددگار  ہی  نہیں
جیسے    یہاں    قبیلۂ    انصار    ہی     نہیں
تجھ کو سناؤں اور تو ہو جائے سن  کے  شاد
میرے تو  اپنے  ایسے  کچھ  اشعار  ہی  نہیں
اس کے ستم پہ  میں  رہا  خاموش  اس  لیے
کوئی میرا  جہاں  میں   طرفدار   ہی   نہیں
جو مفلس و غریب کے دکھ کو سمجھ سکے
ایسی  ہمارے   ملک   کی   سرکار  ہی  نہیں
اے احتشامؔ  قبر  میں  کیا  لے  کے  جائے  گا
سامانِ     آخرت     ترا    تیار     ہی     نہیں
احتشام انصاری
شعبہ عربی و فارسی
الہ آباد یونیورسٹی
الہ آباد ، یوپی

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔