کوئیزکمپٹیشن میں  ٹاپر طلباء کو بیداری کارواں کے صدرنظرعالم کے ہاتھوں اعزازسے نوازاگیا

دربھنگہ: پریس ریلیز۔ کیوٹی اسمبلی حلقہ کے برہی گاؤں میں دی اسپرٹ کوئیز کمپٹیشن۰۲۰۲ کا انعقاد کیا گیا۔ اس کوئیزکمپٹیشن میں کیوٹی سے تقریباً 965 بچوں نے حصہ لیا۔  جس میں سیکڑوں بچوں نے اچھا رینک حاصل کیا۔ یہ کوئیز کمپٹیشن  ۷ویں کلاس سے لیکر ۲۱ویں کلاس کے بچوں کے بیچ کرایا گیا تھا۔ کوئیزکمپٹیشن میں اچھا رینک حاصل کرنے والے بچوں کو حوصلہ افزائی کے لئے اعزاز سے نوازا گیا۔ کوئیز کمپٹیشن میں بطور مہمان خصوصی آل انڈیا مسلم بیداری کارواں کے صدرنظرعالم نے شرکت کی۔ اس موقع پر کوئیز کمپٹیشن میں ٹاپر طلباء کو بیداری کارواں کے صدرنظرعالم کے ہاتھوں اعزاز سے نوازا گیا۔ ٹاپر بچوں میں محمداسعد جلوارہ، (۷ویں کلاس)،عبیداللہ، برہی  (۸ویں کلاس)، آلوک کمار، کوئلہ استھان(۹ویں کلاس)،ہرش راج پرساد،ننورا(۹ویں کلاس)،شاہنواز، اسراہا(۲۱ویں کلاس)،محمداشرف، جلوارہ(۲۱ویں کلاس) کے نام شامل ہیں۔پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے نظرعالم نے محمدحسین کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ کیوٹی تعلیم کے معاملے میں ہمیشہ سے پیچھے رہا ہے انہوں بہتر کوشش کی  ہے کہ کوئیز کمپٹیشن کراکر بچوں کی صلاحیت اور بچوں میں کمپٹیشن میں حصہ لینے کی لو جلائی جائے۔ اسے اور بھی جگہوں پر کرانے کی ضرورت ہے تاکہ بچے اپنے بہتر مستقبل کو لیکرفکرمند ہوں اور اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے لئے آگے بڑھ سکیں۔ نظرعالم نے کہا کہ ہمارے بچوں کے اندر بڑے پیمانے پر بے راہ روی بڑھتی جارہی ہے اسے گارجین کو روکنا پڑے گا اور بچوں کی تعلیم پر دھیان دینا ہوگا۔ بغیر تعلیم کے ہم کہیں بھی کامیاب نہیں ہوسکتے۔ ضرورت ہے کہ ابھی کے وقت میں اپنے بچوں کو گارجین شپ میں رکھتے ہوئے اعلیٰ سے اعلیٰ تعلیم دلائی جائے تاکہ مسلمانوں کی حصہ داری ہرشعبے میں ہوسکے۔ اگر ہم اپنے بچوں کو تعلیم نہیں دلاپارہے ہیں تو یاد رکھئے ہم اپنی نسل کو بربادی کی طرف دھکیلنے کا کام کررہے ہیں۔ اس لئے ضرورت ہے کہ آپ ایک وقت ہی کھانا کھائیے مگر بچوں کو تعلیم ضرور دلوائیے۔ نظرعالم نے مزید کہا کہ ہمارے بچے اور بچیاں ان دنوں بہت زیادہ گمراہ ہوکر غیرمسلم لڑکوں کے ہاتھوں کاکھلونا بنتے جارہے ہیں اس پر سماج کے ذمہ داروں اور گارجین کو زیادہ  دھیان دینے کی ضرورت ہے۔ تعلیم کے نام پر گھر سے نکلنے والے بچے بچیاں غیرمسلم لڑکوں کے ساتھ بہت زیادہ دلچسپی دکھاکر قوم کی شبیہ کو داغدار کررہے ہیں اور مذہب بھی تبدیل کررہے ہیں۔ اسے روکنا ہم سبھوں کی  ذمہ داری ہے۔پروگرام کی نظامت فرحان اختر نے کیا۔کوئیز کمپٹیشن کے روح رواں محمدحسین نے تمام مہمانوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ اس علاقے کے بچوں کے اندر جوصلاحیت ہے اسے آگے لایا جائے اور بہتر تعلیم حاصل کرنے میں بچوں کی مدد کی جائے۔ آگے بھی انہوں نے ایسے کوئیز کمپٹیشن کے انعقاد کی بات کہی۔اس موقع پر بطور مہمان فرقان شیخ، ذکی احمد، ریاض احمد،محمدعلی، محمداعظم، مدن سر، رمیش سر وغیرہ کثیرتعداد میں لوگ کوئیز کمپٹیشن میں شامل ہوئے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔